چھٹا مرحلہ

    امتحان کا انعقاد     (Conducting Exams)

اصول وضوابط بسلسلہ امتحان برائے تحفیظ القرآن

  1. حفظ القرآن کا تقریری امتحان سال میں 4 مرتبہ (جنوری، اپریل، جولائی، اکتوبر میں) ہو گا۔
  2. حفظ القرآن کے امتحان کے وقت امیدوار کے پاس مدرسہ سے جاری کردہ حفظ کی اصل سند/تکمیلِ حفظ کا تصدیق نامہ موجود ہونا ضروری ہے ورنہ امتحان میں شمولیت کی اجازت نہیں ہوگی۔
  3. شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کی طرف سے شہر سطح پر 3 ممتحنین (Examiners) کا تقرر کسی ایک مقام پر کیا جائے گا۔ مقرر کردہ ممتحنین (Examiners) ہی حفظ القرآن کا امتحان لینے کے مجاز ہیں۔ اس کے علاوہ کسی اور کو امتحان لینے کی اجازت نہیں ہے۔ اسی طرح جس مقام کو متعین کیا جائے گا اسی مقام پر آ کر امتحان دینا ضروری ہو گا۔
  4. کنزالمدارس بورڈ پاکستان سے ملحقہ اداروں کے سابقہ حفاظ بھی اپنے متعلقہ ادارے کے ذریعے امتحانی داخلہ فارم ارسال کر سکتے ہیں اور حفظ القرآن کا امتحان دے کر کامیاب ہونے کی صورت میں کنزالمدارس بورڈ پاکستان کی سند حاصل کر سکتے ہیں۔ موجودہ طلبہ/طالبات کے لئے امتحان کے جو اُصول و ضوابط ہیں سابقہ حفاظِ کرام کے بھی وہی اُصول و ضوابط ہیں۔

تحفیظ القرآن کے امتحان کا انداز اور طریقہ کار

  1. قرآنِ پاک کے حفظ کا امتحان لینے کے لئے 30 پاروں کو 5 حصوں میں تقسیم کیا جائے گا اور ہر حصّے سے یاداشت کا ایک ایک سوال کیا جائے گا۔ یوں کل 5 سوالات کئے جائیں گے البتہ ضرورت و حاجت کی بنا پر ایک سے زائد سوالات بھی کئے جا سکتے ہیں۔
  2. ايک گھنٹے میں کم از کم 3 اور زياده سے زياده 4 امیدواروں کا امتحان ليا جا ئے گا نیز ایک وقت میں ایک ہی امیدوار کا امتحان لیا جائے گا۔
  3. ايک سوال میں 3 غلطياں ہو جانے پر اس سوال کو منسوخ کر کے اگلا سوال کيا جائے گا۔
  4. سوال کرتے وقت امیدوار کو کم از کم ايک لائن بلند آواز سے پڑھ کر سنائی جائے گی نیز امیدوار کی سمجھ میں نہ آنے کی صورت میں یہی لائن ايک سے زائد بار يا مزيد اگلی لائن بھی پڑھ کر سنائی جا سکتی ہے۔
  5. سوال میں مکمل ايک رکوع اوّل تا آخر سنا جائے گا اور مکمل ايک رکوع سننے کی صورت میں سوال رکوع کی ابتدا سے کیا جائے گا يا پھرسوال میں 10 لائنیں سنی جائیں گی اور 10 لائنیں سننے کی صورت میں يہ 10 لائنیں  ابتدا، درمیان یا آخر کہیں سے بھی سنی جا سکتی ہیں۔
  6. تعليمی امتحان برائے حفظ القرآن کے کل 100 نمبرہيں جس کی تقسیم کاری درج ذيل ہے
یادداشت (Memory)
کل نمبر رکوع نمبر بتانے کے رکوع نمبر بتانے کے سورت کا نام بتانے کے
60 50 5 5
ادائیگی (Pronunciation)
کل نمبر تلاوت (ترتیل سے) معلوماتِ قواعد اجراءِ قواعد مخارج و صفات
40 5 5 10 20

يادداشت کے 60 نمبروں کی تقسیم و تفصیل  درج ذیل ہے

  1. يادداشت کے 5 سوالات میں سورت کا نام درست بتانے کے 5 نمبر، رکوع نمبر درست بتانے کے 5 نمبر اور غلطی کئے بغير درست سنانے کے 50 نمبر ہيں۔
  2. ہر سوال میں يادداشت کے 12 نمبر ہيں۔

      ٭ سورت کا نام بتانے کا 1 نمبر، رکوع نمبر بتانےکا 1 نمبر اور بقیہ 10 نمبر سنانے کے ہيں۔

  1. فی سوال يادداشت کے 12 نمبروں کی تقسیم کاری يوں ہو گی

      ٭ سورت کا نام درست نہ بتانے پر 1 نمبر کاٹ ليا جائے گا۔

      ٭ رکوع نمبر بھی درست نہ بتانے پر مزيد 1 نمبر کاٹ ليا جائے  گا۔

  1. اب سنانے کے بقیہ 10 نمبروں میں سے

      ٭ پہلی غلطی آنے پر 10 نمبروں میں سے 2 نمبر پھر دوسری غلطی آنے پر بقیہ 8 نمبروں میں سے  2 نمبر اور تيسری غلطی آ جانے پر بقیہ 6 نمبروں میں سے 2 نمبر اور کاٹ لئے جائيں گے۔

      ٭ اور آخر میں بقیہ 4 نمبروں کو اس صورت میں ديا جائے گا کہ اگر امیدوار نے تیسری غلطی آنے تک کم از کم 4 يا اس سے زائد لائنیں (اغلاط والی لائنوں کے علاوہ لائنیں) درست سنائی ہوں بصورتِ ديگر یہ 4 نمبر بھی کاٹ لئے جائيں گے۔

  1. يادداشت کے ايک سوال میں تیسری غلطی آنے پر سوال منسوخ کر ديا جائے گا۔
  2. يادداشت کی مختلف اغلاط کی تعريف

يادداشت میں 3 طرح کی اغلاط پائی جاتی ہيں

    (I)بھول جانے، کلمہ وغيره چھوڑنے يا بدلنے کی غلطی
    (II) لفظی غلطی
    (III) اٹکنے کے اعتبار سے غلطی

       بھول جانے، کلمہ وغيره چھوڑنے يا بدلنے کی غلطی

      ٭ یعنی پڑھنے کے دوران کسی کلمہ، لائن يا آيت وغيره  کا بھول جانا يا جلد بازی کے سبب چھوڑ دينا يا بھول جانے کے سبب آگے پڑھ نہ پانا۔

      ٭ متشابہ کے سبب کلمات بدل دينا مثلاً رُسُلِهٖ کو رَسُوْلِهٖ يا خٰلِدِيْنَ فِيْهَا کو خٰلِدُوْنَ فِيْهَا پڑھ دينا۔

      لفظی غلطی

      ٭ یعنی حرف کو حرف سے بدل دينا مثلاً يَعْلَمُوْنَ کو تَعْلَمُوْنَ پڑھ دينا۔

      ٭ حرف گھٹانا يا بڑھانا مثلاً سَمٰوٰتٍ کو سَمَوٰتٍ يا بَيْنَ کو بَيْنَا پڑھ دينا۔

      ٭ حرکات کو تبديل کر دينا مثلاً قَالَ کو قَالُ يا ظُلَلٍ کو ظُلَلًا پڑھ دينا۔

      ٭ ساکن حرف کو متحرک اور متحرک کو ساکن پڑھ  دينا مثلاً اَلَمْ نَشْرَحْ کو اَلَمْ نَشَرَحْ يا خُلُقٍ کو خُلْقٍ پڑھ دينا ۔

      ٭ مشدّد حرف کوغير مشدّد اور غير مشدّد حرف کو مشدّد پڑھ دينا مثلاً اِيَّاکَ کو اِيَاکَ يا سَلَامُ کو سَلَّامُ پڑھ دينا۔

       اٹکنے کے اعتبار سے غلطی

      ٭ ايک ہی سوال میں امیدوار بار بار اٹکے اور پھر بغير بتائے ازخود درست پڑھ لے تو اس طرح 2 مرتبہ اٹکنے پر رعايت ہے جبکہ تیسری مرتبہ اٹکنے  پر 1 غلطی شمار ہو گی۔

      ٭ اسی طرح ايک ہی سوال میں امیدوار کے غلط پڑھنے کی صورت میں فوراً غلطی بتانے کی بجائے امیدوار کو اعاده کروایا جائے گا يا توجہ دلا کر دوباره پڑھنے کو کہا جائے گا اس طرح 2 بار اعاده کروانے يا توجہ دلا کر پڑھوانے کی رعايت ہے جبکہ تیسری بار ايسا ہونے پر اٹکنے کی 1 غلطی شمار ہو گی۔

ادائیگی کے 40 نمبروں کی تقسیم و تفصیل  درج ذیل ہے

مخارج و صفات: 20 نمبر                    قواعدِ اجراء: 10 نمبر

معلوماتِ قواعد: 5 نمبر                      تلاوت (ترتيل سے): 5 نمبر

  1. مخارج و صفات (20 نمبر) تمام حروف کے مخارج و صفات کی اچھی طرح جانچ کی جائے گی بالخصوص حروفِ قريب الصّوت (ت ط، ز ذ ظ، ث س ص، د ض، ک ق، ه ح، ء ع) اور بقیہ حروفِ مستعلیہ (خ، غ) کی جانچ پر خصوصی توجہ دی جائے گی۔
  2. امیدوار نے کسی ايک سوال میں مخارج و صفات کا بہت اچھی طرح لحاظ رکھا مگر دوسرے سوال میں کمزوری رہی تو پہلے سوال کے مطابق نمبر نہیں دئیے جائیں گے بلکہ پانچوں سوالات کے مکمل جوابات سن کرمجموعی کیفیت کے مطابق نمبر دئیے جائیں گے۔
  3. مخارج و صفات کے 20 نمبروں میں سے ہر حرف کی کمزوری پر 2 نمبر کاٹ لئے جائيں گے، 10 يا اس سے زائد حروف کی کمزوری پر تمام نمبر کاٹ لئے جائيں گے یعنی صفر نمبر ديا جائے گا۔

نمبروں کی کٹوتی عادتاً کمزوری کی صورت میں کی جائے گی۔ عادتاً کمزوری سے مراد پختہ کمزوری ہے جو اکثر جگہ آ رہی ہوتی ہے اور توجہ دلانے پر بھی باقی رہتی ہے۔

  1. مخارج و صفات کے کل 20 نمبروں میں سے

      ٭ 16 تا 20  نمبر حاصل کرنے کی صورت میں مخارج و صفات کی کیفیت ممتاز

      ٭ 13 تا 15 نمبر حاصل کرنے کی صورت میں مخارج و صفات کی کیفیت بہتر

      ٭ 01 تا 12 نمبر حاصل کرنے کی صورت میں مخارج و صفات کی کیفیت کمزور شمار کی جائے گی۔

  1. قواعدِ اجرا (10 نمبر) ان تمام قواعدِ حرکات، تنوين، حروفِ مده و کھڑی حرکات، حروفِ لين، قلقلہ، تشديد و قلقلہ مشدّد، نون ساکن و تنوين کے قواعد (اظہار، اخفاء، ادغام، اقلاب)، ميم ساکن کے قواعد (ادغامِ شفوی، اخفاءِ شفوی، اظہارِ شفوی)، تفخیم و ترقيق، مدات، زائدالف، متفرق قواعد و وقف وغيره کے اجرا میں اغلاط کی خوب جانچ کی جائے گی۔
  2. امیدوار نے کسی ايک سوال میں قواعد کے اجرا کا بہت اچھی طرح لحاظ رکھا مگر دوسرے سوال میں کمزوری رہی تو پہلے سوال کے مطابق نمبر نہیں دئیے جائیں گے بلکہ پانچوں سوالات کے مکمل جوابات سن کر قواعد کے اجرا کی مجموعی کیفیت کے مطابق نمبر دئیے جائیں گے۔
نمبر کیفیت
08 تا 10 نمبر ممتاز اجراء ہونے پر
07 نمبر ممتاز اجراء ہونے پر
01 تا 06 نمبر ممتاز اجراء ہونے پر

ممتاز، بہتر اور کمزور کیفیت میں قواعد کے اجرا کی وضاحت اس طرح ہے کہ

      ٭ ممتاز کیفیت کے لئے تمام قواعد کی ادائیگی کا درست ہونا ضروری ہے، کسی ايک قاعده میں بھی چند مقامات پر کمزوری پائی گئی تو ممتاز کیفیت میں نمبر نہیں دئیے جائیں گے اور اگر تمام قواعد کی ادائیگی ہر ہر جگہ درست ہے تو ممتاز کیفیت میں نمبر دئیے جائیں گے۔

      ٭ بہتر کیفیت کے لئے ان تمام قواعدِ حرکات، حروفِ مده، کھڑی حرکات، حروفِ لين، قلقلہ، تشديد و قلقلہ مشدّد، مدات و وقف وغيره کا درست ہونا ضروری ہے اگر ان میں سے کسی ايک میں بھی چند مقامات پر کمزوری پائی گئی تو بہتر کیفیت میں نمبر نہیں دئیے جائیں گے نیز ان کے علاوه ديگر قواعدِ تنوين، نون ساکن و تنوين کے قواعد (اظہار، اخفاء، ادغام، اقلاب)، ميم ساکن کے قواعد (ادغامِ شفوی، اخفاءِ شفوی، اظہارِ شفوی)، تفخیم و ترقيق، زائد الف، متفرق قواعد وغيره میں سے کسی ايک قاعده میں بھی عادتاً کمزوری نہ ہو یعنی کبھی کبھار بے توجہی کے سبب ديگر قواعد میں سے چند ايک کی ادئیگی کمزور ہو جاتی ہو ليکن توجہ دلانے پر امیدوار اس کمزوری کو فوراً درست کر ليتا ہو تو اس صورت میں بہتر کیفیت میں نمبر دئیے جائیں گے۔

      ٭ کمزور کیفیت کے لئے تمام قواعد میں سے کسی ايک قاعده کا بھی عادتاً کمزور ہونا  کافی ہے۔

نوٹ
عادتاً کمزوری سے مراد پختہ کمزوری ہے جو اکثر جگہ آ رہی ہے اور توجہ دلانے پر بھی امیدوار اس کمزوری کو  فوراً دور نہ کر سکتا ہو۔

معلوماتِ قواعد (5 نمبر) معلوماتِ قواعد کے کل 5 سوالات کئے جائیں گے۔ ہر سوال کا 1 نمبر ہے۔

تلاوت (ترتیل سے) (5 نمبر)

نمبر کیفیت کے
04 تا 05 نمبر ممتاز لہجہ ہونے پر
03 نمبر بہتر لہجہ ہونے پر
01 تا 02 نمبر کمزور لہجہ ہونے پر

کمزور، بہتر اور ممتاز کیفیت میں نمبرات کی تقسیم کاری درج ذیل ہے

کمزور بہتر ممتازاعد
01 تا 69 نمبر 70 تا 79 نمبر 80 تا 100 نمبر

حفظ القرآن میں کامیابی کا معیار 70 نمبر ہیں 69 نمبر ہونے کی صورت میں بھی دوبارہ سے امتحان دینا ہو گا۔

یاد رہے! دوبارہ امتحان نیا امتحانی داخلہ فارم مع فیس جمع کروانے کی صورت میں اگلے امتحان کے موقع پر  لیا جائے گا۔

اصول و ضوابط بسلسلہ امتحان برائے درسِ نظامی، تخصصات، تجوید و قراءت

امتحان صرف ان مدارس کے طلبہ و طالبات کا ہو گا، جن کا کنزالمدارس بورڈ پاکستان سے با قاعدہ الحاق (Affiliation) ہو چکا ہے اور ان کی الحاق فیس اور سالانہ فیس کلیئر (Clear) ہو۔

سالانہ امتحان پورے سال کے نصاب (Syllabus) سے ہو گا۔

الشہادۃ الثانویہ عامہ/الشہادۃ الثانویہ خاصہ سالِ اول کی کامیابی کے بعد سالِ دوم کا امتحان دو سال میں پاس کرنا ضروری ہے، زائد عرصہ کی صورت میں الشہادۃ الثانویہ عامہ سالِ اول اور الشہادۃ الثانویہ خاصہ سالِ اول کالعدم (Cancel) کر دیا جائے گا اور درجہ الشہادۃ العالیہ (A.) میں تین سال اور الشہادۃ العالمیہ (M.A.) میں پانچ سال کے اندر سالِ دوم کا امتحان پاس کرنا ضروری ہے، زائد عرصہ کی صورت میں سالِ اول کا امتحان کالعدم (Cancel) ہو گا۔

درجہ متوسطہ میں اُمیدوار کی عمر کم از کم 12 سال اور عامہ اول میں 13 سال ہونا ضروری ہے۔

نوٹ رزلٹ کارڈ کے اجرا تک اُمیدوار کا مذکورہ عمر کا ہونا ضروری ہے لہٰذا پرنسپل کو چاہیے کہ ایسے امیدوار جو امتحانی داخلہ فارم جمع کرواتے وقت تو اس مقرر کردہ عمر (Age Limit) تک نہ پہنچے ہوں مگر رزلٹ کارڈ کے اجرا کی تاریخ تک مقرر کردہ عمر تک پہنچ جاتے ہوں ایسے طلبہ کے امتحانی داخلہ فارم شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کو ارسال (Post) کر دیں۔

سالانہ امتحان میں عامہ اول، خاصہ اول، عالیہ اول، عالمیہ اول میں شرکت کی تو اسی سالانہ (Annual) امتحان سے متصل ضمنی (Supplementary) امتحان میں نئے امیدوار کے طور پر بالترتیب عامہ دوم، خاصہ دوم، عالیہ دوم اور عالمیہ دوم میں شرکت نہیں کر سکتا۔ اگلے سال سالانہ میں ہی شرکت کا اہل (Eligible) ہے۔

مقطوع اللحیۃ طلبہ کو امتحان میں شرکت کی اجازت نہیں ہو گی۔

کنزالمدارس بورڈ پاکستان کے تحت درسِ نظامی اور تخصصات (Specialization) کے سالانہ (Annual) امتحان شعبان المعظم میں  منعقد کئے جائیں گے۔

الشہادۃ العالمیہ سالِ دوم اور تخصص سالِ دوم کا تحقیقی مقالہ (Research Thesis)تحریر کر کے جمع کروانے کا آخری وقت پانچ شعبان المعظم ہے۔

ابتدائیہ /اعدادیہ / متوسطہ اول کے امتحانات کنز المدارس  بورڈ کے تحت نہیں ہوں گے۔

تجوید و قراءت کا امتحان سال میں ایک مرتبہ درسِ نظامی و تخصصات کے امتحانات کے ساتھ  ہو گا نیز تجوید و قراءت کا امتحان  تقریری و تحریری (Oral & Written) صورت میں ہو گا۔

کنزالمدارس بورڈ پاکستان کے تعلیمی نظام کی درجہ بندی

* * * * * حیثیت درجات
مڈل (3 سالہ)بر مساوی المتوسطة/التجويد وتحفيظ القرآن
میٹرک (2 سالہ)ر مع الشهادة الثانوية العامة
انٹر میڈیٹ (2سالہ) مع الشهادة الثانوية العامة
بی اے (2 سالہ) مع الشهادة الثانوية العامةبر
ایم اے عربی و اسلامیات (2 سالہ) معر الشهادة العالمية
* * * * * * * * تخصصات

امتحانات کے دوران نقل/غیر اخلاقی حرکات اور پرچہ کی منسوخی

امتحانات کے دوران نقل یا غیر اخلاقی حرکات کرنے کی صورت میں  پرچہ منسوخ (Cancel) کرنے کے اصول  و ضوابط درج ذیل ہیں

کمرۂ امتحان اور موبائل فون

کمرۂ امتحان میں موبائل فون لانا ممنوع (Forbidden) ہے۔ اگر کوئی اُمیدوار کمرۂ امتحان میں موبائل لے کر آیا تو اس کے موبائل کو  ضبط (Confiscate) کر لیا جائے گا اور پرچہ ختم ہونے پر واپس کیا جائے گا لیکن ساتھ میں متنبہ (Warn) کر دیا جائے گا  کہ آیندہ اگر مرکزِ امتحان میں موبائل لے کر آنا پایا گیا تو پرچہ منسوخ (Cancel) کر دیا جائے گا۔

کاروائی نقل کی صورت
آدھا گھنٹہ بعد سوالیہ پرچہ دیا جائے۔ سوالیہ پرچہ ملنے سے پہلے کمرۂ امتحان میں امید وار سے نقل کا مواد (بصورت کتاب/پرچہ/موبائل) بر آمد
سوالیہ پرچہ ضبط کر لیا جائے اور ایک گھنٹہ بعد سوالیہ پرچہ دیا جائے۔ سوالیہ پرچہ تقسیم ہونے کے بعد نقل کا مواد بر آمد ہوا لیکن امیدوار نے ابھی اس کو جوابی کاپی پر تحریر نہیں کیا

پرچہ منسوخ (Paper Cancel)

مواد کو جوابی کاپی کے ساتھ منسلک کر دیا جائے۔ دیا جائے۔

ممتحن جوابی کاپی کے سر ورق پر مذکورہ مسئلہ تحریر کر کے دو گواہان (اساتذہ) کے دستخط ثبت کروائے۔

سوالیہ پرچہ تقسیم ہونے کے بعد نقل کے مواد سے اُمیدوار نے جوابی کاپی پر اس کو (کم یا زیادہ) تحریر کر لیا

پرچہ منسوخ (Paper Cancel)

مواد کو جوابی کاپی کے ساتھ منسلک کر دیا جائے۔ دیا جائے۔

ممتحن جوابی کاپی کے سر ورق پر مذکورہ مسئلہ تحریر کر کے دو گواہان (اساتذہ) کے دستخط ثبت کروائے۔
کمرۂ امتحان کے باہر (وضو خانہ، استنجا خانہ،پانی پینے کی جگہ يا راہداری وغیرہ میں) نقل کرتے ہوئے (کسی کتاب، کاغذیا پرچہ سے دیکھتے ہوئے یا کسی دوسرے سے مدد لیتے ہوئے) پکڑے جانا

تمام پرچے منسوخ (Paper Cancel))

مواد کو جوابی کاپی کے ساتھ منسلک کر دیا جائے۔ دیا جائے۔

ممتحن جوابی کاپی کے سر ورق پر مذکورہ مسئلہ تحریر کر کے دو گواہان
اُمیدوار سے امتحانات کے دوران تین بار نقل کا مواد بر آمد ہوا اگرچہ مختلف پرچہ جات میں ہو

اولاً تفہیم کی جائے اور نشست تبدیل کر دی جائے۔

باز نہ آنے کی صورت میں ایسے اُمیدواروں کی جوابی کاپی آدھا گھنٹہ کے لئے تادیباً ضبط کر لی جائے۔ئے۔ دیا جائے۔

پھر بھی باز نہ آئیں تو طریقہ کار کے مطابق ایسے امیدواروں کے پرچے منسوخ کر دئیے جائیں۔کر کے دو گوا
اُمیدواروں کا ایک دوسرے سے پوچھ کر سوالات حل کرنا

پرچہ منسوخ (Paper Cancel)

ممتحن جوابی کاپی کے سر ورق پر مذکورہ مسئلہ تحریر کر کے دو گواہان (اساتذہ) کے دستخط کروائے۔ے۔ دیا جائے۔

مذکورہ بالا تادیبی کارروائیوں کی مزاحمت پر نگرانِ مرکزِ امتحان کے ساتھ بدتمیزی کرنا

پرچہ منسوخ (Paper Cancel)

ممتحن جوابی کاپی کے سر ورق پر مذکورہ مسئلہ تحریر کر کے دو گواہان (اساتذہ) کے دستخط کروائے۔ے۔ دیا جائے۔

اس کے علاوہ بھی کسی طرح کی تفہیم کرنے پر بدتمیزی/غیر اخلاقی حرکت کرنا

طلبہ یا طالبات کا ایک دوسرے کی جگہ پر پرچہ دینا

سالانہ یا ضمنی امتحان میں اگر کسی اُمیدوار کی جگہ کوئی دوسرا امتحان دیتا ہے تو امیدوار کا امتحان منسوخ کر دیا جائے گا اور اگر دوسرا فرد جو امیدوار کی جگہ امتحان دینے آیا وہ بھی طالبِ علم/طالبہ ہے تو اس کے اپنے تمام پرچہ جات منسوخ کر دئیے جائیں گے۔

مرکزِ امتحان میں تاخیر سے آنے والے امیدوار کے لئے اصول

امیدوار کو مقررہ وقت کے بعد امتحان میں شامل ہونے کی اجازت نہیں ہے البتہ اگر امیدوار کسی معقول عذر یا حادثہ کی وجہ سے لیٹ ہو گیا تو نگرانِ مرکزِ امتحان کو صورتحال دیکھ کر 30 منٹ تک کی تاخیر پر امتحان کی اجازت دینے کا اختیار ہے۔ 30 منٹ سے زائد تاخیر پر امتحان میں شامل ہونے کی مطلقاً اجازت نہیں ہے۔

نوٹ

پرچہ دینے کی اجازت کی صورت میں جوابی کاپی حل کرنے کے لئے اختتامی وقت سے زیادہ وقت نہیں دیا جائے گا۔

جوابی کاپی (Answer Sheet) سے متعلقہ ہدایات و شرائط

      1. امیدوار جوابی کاپی پر درجہ، تاریخ، مضمون، مرکز امتحان، رول نمبر تحریر کرتے وقت تسلی کر لے کہ ان چیزوں کا اندارج درست ہے ورنہ جوابی کاپی مشتبہ ہونے کی وجہ سے کالعدم ہو جائے گی اب یہ پرچہ امیدوار کو ضمنی میں دینے کی اجازت ہو گی اور اس کا ذمہ دار خود امیدوار ہی ہے۔
      2. جوابی کاپی/اضافی کاپی (B Copy) پر نگرانِ مرکزِ امتحان/معاون کے دستخط کروانا اُمیدوار کے لئے لازمی ہے، دستخط کے بغیر جوابی کاپی/اضافی کاپی کالعدم (Cancel) قرار دی جائے گی۔
      3. ہندسوں (Digits) اور لفظوں (Words) دونوں طرح رول نمبر کا اندراج کرنا لازمی ہے۔
      4. جوابی کاپی پر درج ہدایات کی پاسداری کرنا ہر اُمیدوار کی ذمہ داری ہے اور وہ ہدایات یہ ہیں

        (I) اُمیدوار سے متعلقہ جوابی کاپی کی تمام خالی جگہوں کا پُر ہونا ضروری ہے، بصورتِ دیگر شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان ذمہ دار نہ ہو گا۔

        (II) جوابی کاپی پر نام کے بجائے صرف امتحان کے لئے جاری کردہ رول نمبر ہی لکھا جائے، اس کے علاوہ نام یا کوئی مخصوص نشانی ہرگز نہ لگائیے، بصورتِ دیگر پرچہ منسوخ کیا جا سکتا ہے۔

        (III) جوابات صرف شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کی جانب سے جاری کردہ جوابی کاپی پر ہی قابلِ قبول ہوں گے۔ اسی طرح ایسی جوابی کاپی/اضافی کاپی جس پر نگرانِ مرکزِ امتحان کے دستخط نہ ہوں، قبول نہ کی جائے گی۔

        (V) جوابی کاپی پر کالی اور نیلی روشنائی استعمال کریں، اس کے علاوہ کسی اور قسم کی روشنائی استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہے۔

        (VI) پرچہ مکمل حل کرنے کے بعد خالی صفحات کو امیدوار لائنیں لگا کر کراس (Cross) کر دے۔

        (VII) وقتِ مقررہ کے بعد امتحان میں شرکت کی اجازت نہ ہو گی۔

        (VIII)نصف وقت گزرنے سے پہلے جوابی کاپی وصول نہ کی جائے گی۔

        ((IX)وقت ختم ہونے سے 10 منٹ قبل اضافی کاپی، جوابی کاپی کے ساتھ منسلک کر لیجئے، وقت ختم ہوتے ہی کاپی لے لی جائے گی۔

        (X)اگر امیدوار کسی وجہ سے کمرۂ امتحان احتجاجاً چھوڑے گا تو کسی بھی صورت میں اس مضمون کا امتحان دوبارہ نہ لیا جائے گا۔

        (XI)کمرۂ امتحان (Examination Room) میں موبائل فون اور اسی نوعیت کا کوئی دوسرا آلہ (Equipment) لے جانا سخت ممنوع ہے۔

        (XII)مندرجہ ذیل میں سے کوئی بھی صورت پائی گئی تو پرچہ منسوخ کیا جا سکتا ہے:

      ٭ نقل کرتے یا کرواتے ہوئے پکڑے جانا یا کسی قسم کا ممنوعہ مواد بر آمد ہونا۔

      ٭ جوابی کاپی/حاضری شیٹ پر رول نمبر نہ لکھنا یا غلط لکھنا۔

      ٭ اپنے رول نمبر پر حاضری نہ لگانا۔

      ٭ دورانِ امتحان نظم و ضبط سے غفلت برتنا ۔

      ٭ دوران امتحان بدتمیزی/غیر اخلاقی حرکت کرنا۔

      ٭ کسی دوسرے امیدوار کی جگہ امتحان دینا یا دلوانا۔

      ٭ اضافی کاپی پر نگرانِ مرکزِ امتحان کے دستخط ثبت نہ کروانا

نوٹ

کرونا سے تحفظ کے لئے گورنمنٹ کی طرف سے جاری کردہ حفاظتی اقدامات پر عمل کیا جائے۔

جوابی کاپی (Answer Sheet) حل کرنے کے معاون نکات

    1. جوابی کاپی کے سر ورق پر مطلوبہ جگہ میں اپنا رول نمبر، درجہ (Class)، مرکزِ امتحان کا نام و دیگر مطلوبہ کوائف کا صحیح اندراج کریں۔
    2. اضافی کاپی (B Copy) کی صورت میں مذکورہ بالا کوائف کا درست اندراج اضافی کاپی پر کرنا ہرگز نہ بھولیں۔
    3. اسی طرح سوالیہ پرچہ کو بھی بغور چیک کر لیجئے کہ آپ جس درجہ (Class) کا امتحان دینا چاہتے ہیں، سوالیہ پرچہ بھی اسی درجہ کا ہے یا نہیں؟
    4. جوابات تحریر کرنے سے پہلے سوالیہ پرچہ بغور پڑھ لیں کہ کون سا سوال پہلے کرنا ہے اور کون سا بعد میں؟ اس کا تعین کر لیں۔
    5. ہر سوال کے نمبروں کے مطابق جواب تحریر کریں، کم یا زیادہ نمبروں والے سوال کے مطابق کم یا زیادہ تحریر کریں۔
    6. آپ نے کون کون سے سوالات حل کرنے ہیں، پرچہ کل کتنے نمبرز کا ہے اور کس سوال کو آپ نے کتنا وقت دینا ہے؟ اس چیز کا تعین بھی پہلے سے کر لیں۔
    7. ایک سوال کے مختلف اجزا کو بالترتیب ایک جگہ حل کریں، پورے پرچے میں پھیلا کر اور منتشر کر کے نہ لکھیں۔
    8. جوابات تحریر کرتے وقت انتہائی احتیاط سے کام لیں تا کہ کوئی غیر شرعی یا سخت بات زیر قلم نہ آنے پائے مثلاً

      ٭ ترجمۃ القرآن کے پیپر میں غلط و فاسد (False and Corrupt) ترجمہ کرنا ۔

      ٭ قرآن و حدیث کی ایسی شرح (Explanation) کرنا جو منقول نہ ہو یا تفسیر بالرائے کرنا۔

      ٭ جلالین کے پرچہ میں اپنی طرف سے غرضِ مفسر بیان کرنا۔

      ٭ اعتقادی مسائل میں قضیہ جات کو غلط ترتیب دینا اور فاسد نتیجہ اخذ کرنا۔

      ٭ فلاسفہ کا قرآن و حدیث کے مخالف مؤقف کو تحریر کرنا اور پھر قرآن و حدیث سے اس کا رد نہ کرنا۔

      ٭ فقہی مسائل میں ائمہ کی طرف ایسا قول منسوب کرنا جو ان سے مروی ہی نہ ہو یا غلط نسبت کرنا مثلاً امام محمد کے قول کو امام ابو یوسف کی طرف منسوب کرنا یا غیر مفتٰی بہ کو مفتٰی بہ قرار دینا یا راجح و مرجوح کے درمیان فرق نہ کرنا۔

      ٭ پیپر میں کوئی ایسا عقیدہ تحریر کرنا جو عقائدِ اہلسنت سے نہ ہو یا عقائد کے پیپر میں کوئی ایسی بات تحریر کرنا کہ جس کی وجہ سے کفرِ لزومی یا التزامی لازم آتا ہو لہٰذا بھرپور اور اچھی تیاری کے ساتھ احتیاط کا دامن تھامتے ہوئے پیپر حل کیجئے۔

  1. جوابات لکھنے کے لئے بڑے بڑے حاشیے لگا کر جوابی کاپی کا سائز کم نہ کریں نیز سطریں (Lines) چھوڑ کر بھی نہ لکھیں۔
  2. مرکزِ امتحان میں موبائل فون، Scientific کیلکولیٹر وغیرہ جو چیزیں لے جانا منع ہے وہ چیزیں ہرگز نہ لے جائیں۔
  3. سرخ قلم کا استعمال نہ کریں، شہ سرخی (Headline) کے لئے نیلا (Blue) یا سیاہ مارکر (Black Marker) استعمال کریں۔ ایسا نہ ہو کہ سارا پرچہ مارکر یا قط لگے ہوئے کسی قلم (Stuck Pen) وغیرہ سے حل کیا جائے۔
  4. رف عمل (Ruff Work) کی ضرورت پڑے تو جوابی کاپی کے اوپر ہی ایک طرف ”رف عمل“ کا خانہ بنا کر رف عمل یا پڑتال کریں۔
  5. پہلے اچھی طرح سوال کو سمجھیں پھر لکھنا شروع کریں، جو جواب مطلوب ہے وہی تحریر کریں۔ سوال نمبر اور جز نمبر لکھ کر جواب لکھنا شروع کر دیں مثلاً سوال نمبر جز الف۔
  6. سوالیہ پرچے میں دیئے گئے ہر سوال یا جز کو جوابی کاپی پر لکھنا ضروری نہیں بلکہ وقت کا ضیاع ہے البتہ اگر اعراب لگانے کے متعلق سوال کیا جائے تو اس جز کو جوابی کاپی پر لکھ کر اعراب لگائیں۔
  7. روزانہ مرکزِ امتحان آتے وقت اپنی تسلی کر لیں کہ رول نمبر سلپ آپ کے پاس موجود ہے۔

جوابی کاپی (Answer Sheet) گم ہونے کی صورت میں شعبۃ الامتحانات کا اُصول

اُمیدوار کی جوابی کاپی گم  ہونے کی صورت میں تحقیق و تفتیش کی جائے گی اورمتعلقہ ذمہ داران کے خلاف تادیبی کاروائی کی جائے گی۔ اگر امیدوار اس میں ذمہ دار نہ پایا گیا تو اس کو اندازے سے/دیگر مضامین کے حاصل کردہ نمبرات کے تناسب سے نمبرز نہیں دئیے جائیں گے بلکہ دوبارہ امتحان لیا جائے گا۔ دوبارہ امتحان کی  صورت میں اُمیدوار سے فیس نہیں لی جائے گی۔

طلبہ/طالبات کے لئے امتحانی مرکز کی تبدیلی

مرکزِ امتحان کی تبدیلی درج ذیل شرائط کے ساتھ ہو گی

  1. امیدوار مرکزِ امتحان تبدیل کروانے کے لئے شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کی طرف سے جاری کردہ ”درخواست فارم  برائے تبدیلی مرکزِ امتحان“ پُر کرے اور پرنسپل سے تصدیق کروا کر شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کو مع فیس (100روپے) سلپ ارسال کرے۔
  2. سالانہ امتحان شروع ہونے سے ایک ماہ قبل تک مرکزِ امتحان تبدیل کروایا جا سکتا ہے اس کے بعد مرکزِ امتحان تبدیل نہیں کیا جائے گا۔
  3. درخواست موصول ہونے کے بعد شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان درخواست کا جائزہ لے گا، اگر عذر معقول (Reasonable Excuse) ہوا تو اجازت دی جائے گی بشرطیکہ مطلوبہ مرکزِ امتحان میں اس کی گنجائش موجود ہو۔
  4. شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کی جانب سے جاری کردہ درخواست فارم پر درخواست جمع (Submit) کروانا لازمی ہے۔ سادہ کاغذ پر لکھی گئی درخواست یا کسی اور فارمیٹ پر ارسال کی گئی درخواست قابلِ قبول نہیں ہے۔
  5. یہ درخواست فارم فقط مرکزِ امتحان کی تبدیلی کے لئے ہے، نتیجہ امتحان اور نتیجہ کارڈ موجودہ جامعہ /مدرسہ میں ہی ارسال کیا جائے گا۔

شرائط و ضوابط برائے معاون کاتب

  1. ایسا امید وار جومستقل معذوری مثلاً نابیناپن، جزوی نابیناپن، مقطوع الید، فالج وغیرہ کا شکار ہو جس کے باعث وہ لکھنے کے قابل نہ ہو تو اُسے معاون کاتب کی اجازت دی جائے گی، بشرطیکہ ایسی معذوری کی تصدیق پرنسپل کرے۔
  2. مستقل معذوری کی صورت میں امتحانی داخلہ فارم کے ساتھ مصدقہ درخواست اور معاون کاتب کے شناختی کارڈ یا ”ب فارم“ کی کاپی شعبۃ الا متحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کو ضرور ارسال کی جائے۔
  3. حقیقی عارضی معذوری (مثلاً حادثہ وغیرہ) کی صورت میں بھی معاون کاتب کی اجازت دی جائے گی بشرطیکہ امید وار واقعی اس رعایت کا مستحق ہو۔

نگرانِ مرکزِ امتحان/پرنسپل فوراً کسی معاون  کاتب کا انتخاب  کر کے اُمیدوار اور کاتب کےمکمل کوائف  شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ   پاکستان کو ارسال کریں۔ شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ   پاکستان کی طرف سے درخواست منظور ہونے کی صورت میں معاون کاتب کی اجازت دی جائے گی۔

  1. معاون کاتب امیدوار سے کم تعلیمی قابلیت کا ہو۔
  2. اُردو اور عربی رسم الخط کی اچھی استعداد رکھنے والے کو ہی معاون کاتب کے طور پر مقرر کیا جائے گا تاکہ معذور اُمیدوار کے نمبر کم نہ ہوں۔

نوٹ

معذور اُمیدواروں  کو پرچہ حل کرنےکےلیےعام اُمیدواروں سے آدھا گھنٹہ زیادہ وقت دیا جائے گا۔

ایمرجنسی کی صورت میں پرچہ کی منسوخی

کسی شہر یا علاقے میں ایمرجنسی کی صورت میں ازخود پرچہ منسوخ (Cancel) کرنے کی اجازت نہیں  ہو گی۔ اس کے لئے درج ذیل ہدایات پر عمل کرنا ہو گا

  1. ایمرجنسی کی صورت میں نگرانِ مرکزِ امتحان حالات کی مکمل رپورٹ سے شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان کو آگاہ کرے۔ شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان تحقیق و تفتیش (Observation & Investigation) کے بعد نگرانِ مرکزِ امتحان کو حتمی فیصلہ سے آگاہ کر دے گا۔
  2. ایمرجنسی کے پیش نظر پرچہ منسوخ ہونے کی صورت میں وہ پرچہ آخر میں لیا جائے گا یا شعبۃ الامتحانات کنزالمدارس بورڈ پاکستان نئی تاریخ کا اعلان کرے گا۔

ترقی درجہ (Improvement in Grade) کا امتحان

گریڈ میں ترقی (Improvement in Grade) کے لئے سالانہ/ضمنی امتحان میں شرکت کی اجازت ہے اس کی درج ذیل شرائط ہیں جن پر عمل کرنا ہو گا

  1. امیدوار کو گریڈ میں ترقی کے لئے کسی پارٹ کے ایک یا دو مضامین یا مکمل ایک یا دونوں پارٹ کا امتحان  دینے کا اختیار حاصل ہے۔
  2. گریڈ میں ترقی (Improvement in Grade) کے لئے ضروری ہے کہ جب تک اگلی کلاس کے امتحان میں شرکت نہ کی ہو تب تک پچھلی کلاس (Previous Class) کے لئے گریڈ میں ترقی (Improvement in Grade) کا امتحان دے سکتا ہے اور چونکہ عالمیہ دوم کے بعد کوئی کلاس نہیں ہے اس لئے عالمیہ دوم کی حد 2 سال ہے یعنی عالمیہ کے بعد 2 سال تک گریڈ میں ترقی (Improvement in Grade) کا امتحان دے سکتا ہے۔ اس کے بعد اجازت نہیں۔
  3. گریڈ میں ترقی (Improvement in Grade) کے امتحان کے لئے امتحانی داخلہ فارم پُر کر کے فیس سلپ کے ساتھ ارسال کرنا ضروری ہے۔
  4. امتحانی داخلہ فارم کے ساتھ گزشتہ امتحان کے نتیجہ کارڈ کی فوٹو کاپی اسی طرح جامعہ/مدرسہ کے لیٹرپیڈ پر پرنسپل کی تصدیق کے ساتھ گریڈ میں ترقی کے امتحان کی  درخواست (Application) بھی منسلک (Attach) کرنا  ضروری ہے۔
  5. امیدوار نے ایک بار گریڈ میں ترقی (Improvement in Grade) کے امتحان کے لئے اپلائی کر لیا تو اب امتحان میں شریک نہ ہونے کی صورت میں استحقاق ختم ہو جائے گا۔ اب دوبارہ گریڈ میں ترقی کے امتحان کے لئے امتحانی داخلہ فارم جمع (Submit) نہیں کروا سکتا۔